اشتہارات

اپنڑی ، دکان ، کاروبار ،سکول ، کالج ، آنلاین کاروبار ، یا کہیں وی قسم دے اشتہارات کیتے ساکوں ای میل کرو یا فیس بک تے میسج کرو۔

تلے آلا بٹن دباو

ایرانی شاعرہ ‘فروغ فرخزاد’ کی ایک نظم ‘اسیر’ اردو ترجمے کے ساتھ پڑھیے حسان خان

شعر “اسیر” از فروغ فرخزاد شاعر ایرانی را با ترجمه اردو بخوانید

[اسیر – فروغ فرخزاد]

ترا می‌خواهم و دانم که هرگز
به کامِ دل در آغوشت نگیرم
تویی آن آسمانِ صاف و روشن
من این کنجِ قفس، مرغی اسیرم
مجھے تمہاری آرزو ہے (لیکن) میں جانتی ہوں کہ جیسا میرا دل چاہتا ہے اُس طرح تمہیں آغوش میں نہیں لے پاؤں گی۔ تم وہ صاف اور روشن آسمان ہو جبکہ میں قفس کے اس کنارے میں ایک اسیر پرندہ ہوں۔

ز پشتِ میله‌های سرد و تیره
نگاهِ حسرتم حیران به رویت
در این فکرم که دستی پیش آید
و من ناگه گشایم پر به سویت
ان سرد اور تاریک جالیوں کے پیچھے سے میری پُرحسرت نگاہیں تمہارے چہرے کی جانب حیرانی سے تاک رہی ہیں۔ میں اس فکر میں ہوں کہ کوئی ہاتھ سامنے آئے اور میں اچانک تمہاری جانب پر پھیلا دوں۔

در این فکرم که در یک لحظه غفلت
از این زندانِ خامش پر بگیرم
به چشمِ مردِ زندانبان بخندم
کنارت زندگی از سر بگیرم
میں اس فکر میں ہوں کہ ایک غفلت کے لمحے میں اس خاموش زندان سے پرواز کر جاؤں اور مردِ زندان بان کی آنکھوں کے سامنے (اُس کی ناکامی ظاہر کرنے کے لیے) خندہ زن ہوں۔ بعد ازاں، تمہارے پہلو میں نئے سرے سے زندگی کا آغاز کر دوں۔

در این فکرم من و دانم که هرگز
مرا یارای رفتن زین قفس نیست
اگر هم مردِ زندانبان بخواهد
دگر از بهرِ پروازم نفس نیست
میں اس فکر میں تو ہوں لیکن میں جانتی ہوں کہ مجھ میں ہرگز اس قفس کو چھوڑنے کی توانائی نہیں ہے۔ اگر داروغۂ زندان بھی یہ چاہے تب بھی اب مجھ میں پرواز کے لیے سانس باقی نہیں رہی ہے۔

ز پشتِ میله‌ها، هر صبحِ روشن
نگاهِ کودکی خندد به رویم
چو من سر می‌کنم آوازِ شادی
لبش با بوسه می‌آید به سویم
ان جالیوں کے پیچھے سے ہر صبحِ روشن ایک بچّے کی نگاہیں میرے چہرے کے سامنے مسکراتی ہیں۔ میں جب بھی خوشی کا نغمہ شروع کرتی ہوں تو اُس کے لب بوسے کے ہمراہ مری جانب آتے ہیں۔

اگر ای آسمان خواهم که یک روز
از این زندانِ خامش پر بگیرم
به چشمِ کودکِ گریان چه گویم
ز من بگذر، که من مرغی اسیرم
اے آسمان! اگر میں چاہوں کہ ایک روز اس خاموش زندان سے پرواز کر جاؤں تو پھر میں (اُس) طفلِ گریاں کی آنکھوں سے کیا کہوں گی: (کیا یہ کہ) مجھے چھوڑ دو کہ میں ایک اسیر پرندہ ہوں؟

من آن شمعم که با سوزِ دلِ خویش
فروزان می‌کنم ویرانه‌ای را
اگر خواهم که خاموشی گزینم
پریشان می‌کنم کاشانه‌ای را
میں وہ شمع ہوں کہ اپنے دل کے سوز سے ایک ویرانے کو فروزاں کرتی ہوں۔ (لیکن) اگر میں چاہوں کہ خاموشی اختیار کر لوں تو میں ایک کاشانے کو درہم برہم کر دوں گی۔

(فروغ فرخزاد)

 

  التماس ، اگر آپ مندرجہ ذیل نظم کا سرائیکی ، بلوچی ، سندھی ، پشتو ، براھوی ،  پنجابی انگلش یا کسی بھی زبان میں ترجمہ کرنا چاہیں تو کمنٹ سیکشن میں ترجمہ لکھ دیں ہم اس ترجمہ کو اپکی زبان اور نام کے ساتھ اسی نظم میں اضافہ کر دیں گے شکریہ ۔

حسان خان

حسان خان

حسان خان ، کراچی کےرہائشی ہیں ۔ ترکی، فارسی شاعری کے تراجم وسطی ایشیاء کی تاریخ، زبانوں سےخصوصی شغف رکھتے ہیں ۔ با اجازت انکے فارسی ترکی تراجم سرائیکی میں ترجمہ کیےجایںگے۔

ایکوں شئیر کرن کیتے تلویں بٹن دباو

Share on facebook
فیس بک
Share on twitter
ٹوئیٹر
Share on whatsapp
واٹس ایپ
Share on email
ای میل
Share on pinterest
پن ٹریسٹ
Share on google
گوگل
Share on telegram
ٹیلی گرام
Share on print
پرنٹ کرو
Free counters!
Archives
اشتہارات

اپنڑی ، دکان ، کاروبار ،سکول ، کالج ، آنلاین کاروبار ، یا کہیں وی قسم دے اشتہارات کیتے ساکوں ای میل کرو یا فیس بک تے میسج کرو۔

تلے آلا بٹن دباو

Free counters!
Archives
error: Content is protected !!