مختصر تعارفی سلسلہ سرائیکی ادبی شخصیات 2 ( نذر محمد )۔ جہانگیر سوز

مختصر تعارفی سلسلہ

نام— نزر محمد

تخلص— نزیر قیصرانی

سکونت— وہوا تحصیل تونسہ شریف ضلع ڈیرہ غازی خان

تصانیف— موسم گل استعارہ ہے، بارش تو ہو، اپنا درد سلامت رکھنا۔
ایوارڈ یافتہ ترانہ ( اک اور قدم ساتھی)

ڈاکٹر نذر نذیر قیصرانی صاحب انتہائی ملنسار، شفیق، درد مند انسان تھے۔ آپ کی ادبی و سماجی کاوشوں کو رہتی دنیا تک یاد رکھا جائے گا۔
اللّہ پاک غریقِ رحمت کرے جنت میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے آمین ثم آمین۔
منتخب کلام شاعر۔۔۔

ہمیں گنوا نہ زمانے تیرا اثاثہ ہیں
ہم ایسے لوگ بہت کم جہاں میں آتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
افسوس کہ سمجھا نہ ہمیں اہل نظر نے
ہم وقت کی زنبیل میں ہیروں کی طرح تھے
۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔

نذیر حلقۂ لات و منات میں رہ کر
ہر اک بت سے بغاوت بڑی عبادت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔

اپنا چہرہ بھی نہ کھو بیٹھو کہیں
معتبر ہونے سے پہلے سوچ لو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔

سنگ تو آئیں گے چاروں اور سے
باثمر ہونے سے پہلے سوچ لو

٭

لکھتا ہوں تو بس تم ہی اترتے ہو قلم سے
پڑھتا ہوں تو الحمد سے والناس بھی تم ہو
تم یوں تو بہت دور بہت دور ہو مجھ سے
محسوس یہ ہوتا ہے میرے پاس بھی تم ہو

٭۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔

وہ دن کے اجالے کا بھی حقدار نہیں ہے
جو رات کے سینے میں سَحر بو نہیں سکتا

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر آنکھ پر آشوب ہے ہر گھر صفِ ماتم
اور جبر کچھ ایسا کہ کوئی رو نہیں سکتا

٭۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

کچے گھڑے سے ہار گیا وہ بھی ایک دن
دریا کو اپنے پانی پہ کتنا غرور تھا

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاتھ کٹتے ہیں یہاں اس جرم پر
باہنر ہونے سے پہلے سوچ لو

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوچی نہ بری سوچ کبھی ان کے لئے بھی
پیوست میرے دل میں جو تیروں کی طرح تھے

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔

جن کی تقدیر موجوں کے ہاتھوں میں ہے
ایسے تنکوں سے کیا آسرا مانگنا
٭۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مانگنا جو نذیر اپنے گھر کے لئے
شہر بھر کے لئے وہ دعا مانگنا

٭۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو نے تو ایک دل کا کہا تھا ہمیں نذیر
سر بھی دیا اتار، بتا اور کیا کریں

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔

کتنا سستا ہے انسانیت کا لہو
کتنی تیزی سیاست کے بھاؤ میں ہے

٭۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

جب سے پیسے نے بولنا سیکھا
ہم نے اپنی زبان سی لی ہے

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔

سر صداؤں میں ہی نہیں ہوتے
خامشی بھی بڑی سریلی ہے

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔

لوگ پتھر مارتے تھے جب مجھے
جس نے آ کر پھول مارا کون تھا

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوتے سوتے تو شب کہف بھی کٹ جاتی ہے
روتے روتے بھی کوئی رات بسر کر دیکھو

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کتنا مشکل ہے نذیر اپنے مقابل ہونا
یہ ہمالہ بھی کسی موڑ پہ سر کر دیکھو

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔

خبر ہوئی تو بڑی دیر ہو چکی تھی نذیر
کہ میں تو کچھ بھی نہیں تھا خبر نہ تھی مجھ کو

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قسمیں نہ کھا نذیر کہ مرگِ یقیں کے بعد
مشکل ہے اعتبار، کوئی اور بات کر

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شیشے کی گھٹائیں ہیں یہاں کانچ کے بادل
بارش تو بڑی بات ہے سایہ بھی نہیں ہے

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔

حیرت ہے تری جیب میں آیا ہوں کہاں سے
مانگا بھی نہیں ہے تو نے کمایا بھی نہیں ہے

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آئینے تجھے تیری خبر دے نہ سکیں گے
آ دیکھ میری آنکھ میں تو کتنا حسیں ہے

٭۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

کوئی میری سخاوت بھی دیکھے ذرا
اس کو حاتم کیا خود بھکاری ہوا

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنا درد سلامت رکھنا زخم نہ بھرنے دینا
نکھرے نکھرے اس گلشن کو اور نکھرنے دینا
۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نشانِ حسرت و غم ہوں چھپا ہی رہنے دو
مجھے خدا کے لیے کم نما ہی رہنے دو

٭۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔

دلوں سے دور زمانے کی آنکھ سے اوجھل
میں جس گلی میں پڑا ہوں پڑا ہی رہنے دو

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔

مجھے نہ دادوستائش سے خوش کرو یارو
دریدہ تن ہوں دریدہ قبا ہی رہنے دو

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔

تمہارے پاس تو شمس و قمر بھی وافر ہیں
جو بجھ گیا ہے دیا، بجھا ہی رہنے دو

 

جہانگیر سوز

جہانگیر سوز

جہانگیرسوز سائیں تونسہ شریف دے رہائشی،شاعرتے مشہور ادبی شخصیت ہن۔ انہاں دا اہم سلسلہ سرائیکی ادبی شخصیات دے تعارف ساݙی ویب سائیٹ تے قسط وار شائع تھیندا پے۔ پروفائل اوپن کر کہ پڑھو

ایکوں شئیر کرن کیتے تلویں بٹن دباو

Share on facebook
فیس بک
Share on twitter
ٹوئیٹر
Share on whatsapp
واٹس ایپ
Share on email
ای میل
Share on pinterest
پن ٹریسٹ
Share on google
گوگل
Share on telegram
ٹیلی گرام
Share on print
پرنٹ کرو
error: Content is protected !!